اردوئے معلیٰ

Search

دلِ مضطر میں طیبہ کی بسی ہے آرزو اب تک

اسی امید میں رقصاں رگوں میں ہے لہو اب تک

 

فرامینِ محمد ہیں ہدایت سیدھے رستے کی

ہے صدیوں بعد بھی جاری انہی پر گفتگو اب تک

 

عمل اپنا تو لایا تھا تباہی کے دہانے پر

کسی کے فیض نے رکھا ہے مجھ کو سرخرو اب تک

 

گزر ہوتا تھا جن گلیوں سے سرکارِ مدینہ کا

مہک ان کی وہاں پھیلی ہوئی ہے چار سو اب تک

 

وہ جن کے ذکرِ عالی کو خدا نے کر دیا اونچا

انہی کے گیت گاتے ہیں عنادل خوش گلو اب تک

 

وہ جن ذرّوں نے چومے ہیں تری نعلین کے تلوے

وہ ذرّے ضو فشاں ہیں کہکشاں میں ہو بہو اب تک

 

جو توقیر و شرف بخشا ہے تو نے اپنے حبشی کو

اسی پر رشک کرتے ہیں حسین و خوبرو اب تک

 

خدا نے آپ کو اخلاق کی دولت عطا کی ہے

نہیں دیکھا کسی نے آپ جیسا نرم خُو اب تک

 

ترے روضے کے جلوے تو خیالوں میں بسے ایسے

کہ ان جلووں سے ہے اپنا تخیّل با وضو اب تک

 

محمد کی محبت ہی جو پہلی شرطِ ایماں ہے

فزوں سے ہے فزوں تر ہی محبت کی نمو اب تک

 

مئے عشقِ محمد نے ہے یوں سرشار کر ڈالا

کہ ہیں گردش میں صدیوں سے وہی جام و سبُو اب تک

 

ترِے اسمِ گرامی کو بسایا اپنے سینے میں

جلیلِ بے ہنر کی ہے اسی سے آبرو اب تک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ