دلیلِ منعِ مثلیّت کلامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

آقا کریم کے ارشادِ گرامی ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘
( کون ہے تم میں میرے جیسا ) کو ردیف میں لانے کی سعادت

 

دلیلِ منعِ مثلیّت کلامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

خطِ تنسیخِ مُطلَق ہے مقامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

عبث ہے التزامِ مبحثِ نور و بشر یکسر

حصارِ عجز میں ہیں سب بہ دامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

سخن کا چاند چمکے بھی تو چمکے کس تناظر میں

ورائے مطلعِ طلعت ہے بامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

ترفّع جن کا بے تمثیل ، وسعت بے تقابل ہے

کھُلے ہیں ارضِ حیرت پر خیامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

وہ روئے والضّحیٰ و گیسوئے والیل کی سج دھج

وہ صبحِ اَیُّکُمْ مِثْلِی، وہ شامِ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

یہاں تعمیم میں بھی عِلَّتِ تخصیص ہے لازم

تکاثر میں تفرّد ہے پیامِ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

نہیں امکان میں ہرگز بیانِ مدحِ قُرآنی

ثنا ہم لکھتے ہیں لیکن، بنامِ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

مجالِ مثل سر افگندہ ہے دہلیزِ حیرت پر

ہویدا ہے بہَر سُو نقشِ تامِ ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

 

جہاں وہمِ تساوی کی بھی گنجائش نہ ہو مقصودؔ

کہاں ممکن کہ ہوں پیدا سہامِ’’ اَیُّکُمْ مِثْلِی ‘‘

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ