اردوئے معلیٰ

دل برد از من دیروز شامے فارسی

دل برد از من دیروز شامے

فتنہ طرازے، محشر خرامے

 

روئے مبینش صبح تجلی

لوح جبینش ماہ تمامے

 

مشکیں خط او سنبل بہ گلشن

لعلیں لب او بادہ بہ جامے

 

چشمے کہ کوثر یک جرعہء او

قدے کہ طوباش ادنی غلامے

 

عارض چہ عارض گیسو چہ گیسو

صبحے چہ صبحے شامے چہ شامے

 

آں تیغ ابرو واں تیر مژگاں

آمادہ ہر یک بر قتل عامے

 

برق نگاہش صد جاں بدامن

زلف سیاہش صد دل بہ دامے

 

ہر عشوہء او شیریں مقامے

ہر غمزہء او رنگیں پیامے

 

از جسم لرزاں، لرزاں دوعالم

وز زلف برہمم برہم نظامے

 

گاہے بہ مستی طاوس رقصاں

گاہے بشوخی آہو خرامے

 

از بار مینا لرزش بدستے

وز کیف صہبا لغزش بہ گامے

 

گفتم چہ جوئ، گفتا دل و جاں

گفتم چہ خواہی، گفتا غلامے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ