اردوئے معلیٰ

دل تری یاد سے کس رات ہم آغوش نہیں

نیند آتی مجھے کس وقت ہے کچھ ہوش نہیں

 

رندِ شائستہ ہوں میں رندِ بلا نوش نہیں

ہیں مرے ہوش بجا تیرے بجا ہوش نہیں

 

شاخِ نخلِ چمنستاں ابھی گل پوش نہیں

دیکھنا رنگِ بہاراں کا ابھی جوش نہیں

 

نگہِ ساقیِ گلفام کہ ہے ہوشربا

کون ایسا ہے سرِ بزم کہ مدہوش نہیں

 

سحر انگیزی و شیرینیِ گفتار نہ پوچھ

کون آواز پہ ان کی ہمہ تن گوش نہیں

 

ٹوک دیتا ہے معاً مجھ کو مری لغزش پر

ہے ضمیر اپنا کہ رہتا کبھی خاموش نہیں

 

سرگراں اب بھی ہے کیوں وہ یہ مجھے کیا معلوم

میں وفا کیش نہیں یا میں ستم کوش نہیں

 

تو خطا پوش ہے کیوں تو ہے نظرؔ سے روپوش

میں خطا کر کے بھی تجھ سے کبھی روپوش نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات