دل تصدّق، جاں فدا اور روح قربانِ رسول

دل تصدّق، جاں فدا اور روح قربانِ رسول

کس سلیقہ سے ہوا ہوں میں ثنا خوانِ رسول

 

کس سے ممکن ہے بیان عظمت شانِ رسول

صرف اک ذاتِ خدا ہے مرتبہ دانِ رسول

 

جاں وہی جاں ہے جو ہو دل سے فدائے مصطفیٰ

دل وہی دل ہے جو ہو سو جاں سے قربانِ رسول

 

اس حقیقت سے عیاں ہے ان کی عظمت کا ثبوت

ہم نے اپنے رب کو پہچانا بفیضانِ رسول

 

اکتساب نور کرتے ہیں مہ و مہر و نجوم

مرحبا صلِ علِٰ اے روئے تابانِ رسول

 

میری نظروں میں فضائے باغ جنّت ہیچ ہے

جب سے نظروں میں سمایا ہے گلستانِ رسول

 

ایک میں ہی سرورِ کونین کا واصف نہیں

طائرانِ خلد بھی ہیں زمزمہ خوانِ رسول

 

کاش ایسا ہو کہ جب آئے فرشتہ موت کا

ہو مرے پیش نظر روئے درخشانِ رسول

 

عین ممکن ہے کہ ٹھہرے میری بخشش کا سبب

نظم جو میں نے کہی حافظ بعنوانِ رسول

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جو مجھ سے خطا کار و زیاں کار بھی ہوں گے
اے ختمِ رسل نورِ خدا شاہِ مدینہ
ان کا نہیں ہے ثانی نہ ماضی نہ حال میں
امکانِ حرف و صوت کو حیرت میں باندھ کر
وجودِ شوق پہ اک سائباں ہے نخلِ درود
میں ، مری آنکھیں ، تمنائے زیارت ، روشنی
نبی اکرمؐ شفیع اعظمؐ دکھے دلوں کا پیام لے لو
آنکھ گنبد پہ جب جمی ہوگی
جب چھڑا تذکرہ میرے سرکار کا میرے دل میں نہاں پھول کھلنے لگے
صبح بھی آپؐ سے شام بھی آپؐ سے