اردوئے معلیٰ

Search

دل سپردِ مدحتِ شاہِ اُمم ہے اور بس

رُخ مرے افکار کا سُوئے حرم ہے اور بس

 

اُن کے شہرِ دلنشیں کا ایک مدّاحِ نیاز

نامۂ اعمال میں اتنا رقم ہے اور بس

 

اِک عجب عالَم میں جاری ہے طوافِ بندگی

دل بسوئے قبلۂ حاجات خم ہے اور بس

 

منفعل احساس حاضر ہے حضورِ شاہ میں

جاں معطل، لب مقفل، آنکھ نم ہے اور بس

 

گیسوئے سرکارِ عالَم سایۂ رحمت تمام

نقشِ پائے مصطفیٰ نقشِ اَتم ہے اور بس

 

اور کیا انعام پائیں اور کیا احسان ہو

آپ کا در ہم فقیروں کو بہم ہے اور بس

 

مَیں ہوں اور شہرِ نبی ہے اور اِک تکرار ہے

یہ کرم ہے، یہ کرم ہے، یہ کرم ہے اور بس

 

اذن ہوگا تب لکھے گا مصرعِ نعتِ نبی

ورنہ کاغذ پر دھرا ساکت قلم ہے اور بس

 

باقی سب اعمال میرے بس گمانِ آرزو

اِک شفاعت پر تری قائم بھرم ہے اور بس

 

اُن کی چوکھٹ ہی عنایت کا ہے تابندہ نشاں

اُن کا بندہ ہی مکرم، محترَم ہے اور بس

 

نعت ہے مقصودؔ کے موجود ہونے کا سبب

ورنہ وہ مفقود یا خوابِ عدم ہے اور بس

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ