اردوئے معلیٰ

Search

دل میں کچھ بھی نہ رہے رب کی محبت کے سِوا

اور کیا چاہیے سرکار کی چاہت کے سِوا

 

رب کی رسّی کو پکڑ ، ورنہ بکھر جائے گا

ہاتھ آئے گا نہیں کچھ بھی ندامت کے سوا

 

بندگی رب کی کرو، صحبتِ صالح پکڑو

قیمتی شے ہے کوئی دہر میں عزت کے سوا

 

رب کا منشا ہے یہی ، سنتِ آقا ہے یہی

اُلفتیں دل میں رہیں بغض و عداوت کے سوا

 

کچھ نہیں مانگتا مولا ! ترا بندہ تجھ سے

حشر میں سیّدِ عالم کی شفاعت کے سوا

 

نظمِ دنیا کو ذرا غور سے دیکھو سمجھو

کام یہ کون کرے گا بھلا قدرت کے سوا

 

بے گناہوں کو یہاں قتل جو کر دیتے ہیں

کچھ نہیں اور ملے گا انہیں ذلت کے سوا

 

بات دو لفظوں میں یوں ختم کیے دیتا ہوں

’’ کچھ نہیں اور یہاں جلوئہ وحدت کے سوا ‘‘

 

بچ نہیں پائے گا کوئی بھی اَجل سے طاہرؔ

ہے فنا سب کے لیے دہر میں قدرت کے سوا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ