اردوئے معلیٰ

دل میں یادِ صنم ارے توبہ

کفر اور در حرم ارے توبہ

 

صبحِ خنداں کو دل ترستا ہے

ظلمتِ شامِ غم ارے توبہ

 

مے ہے ساقی ہے ابر ہے لیکن

توڑیں توبہ کو ہم ارے توبہ

 

زندگی کیا اسی کو کہتے ہیں

غم ہی غم، غم ہی غم ارے توبہ

 

بجھ نہ جائے چراغ یہ دیکھو

لو ہے ایماں کی کم ارے توبہ

 

دل کہ نازک سا آبگینہ ہے

اس پہ کوہِ الم ارے توبہ

 

زندگی کی نظرؔ مسافت کیا

بس یہی دو قدم ارے توبہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات