اردوئے معلیٰ

دل و نظر میں لیے عشقِ مصطفیٰ آؤ

خیال و فکر کی حدّوں سے ماورا آؤ

 

درِ رسول سے آتی ہے مجھ کو یہ آواز

یہاں ملے گی تمہیں دولتِ بقا آؤ

 

جلائے رہتی ہے عصیاں کی آگ محشر میں

بس اب نہ دیر کرو شافعِ الورا آؤ

 

برنگِ نغمہِ بلبل سنا کے نعتِ نبی

ذرا چمن میں شگوفوں کا منہ دھلا آؤ

 

برس رہی ہیں چمن پر گھٹائیں وحشت کی

بھٹک رہا ہے بہاروں کا قافلہ آؤ

 

فرازِ عرش سے میرے حضور کو ساغرؔ

ملا یہ حکم کے نعلین زیرِ پا آؤ​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات