اردوئے معلیٰ

دل و نگاہ کی دنیا نئی نئی ہوئی ہے

درود پڑھتے ہی یہ کیسی روشنی ہوئی ہے

 

میں بس یونہی تو نہیں آگیا ہوں محفل میں

کہیں سے اذن ملا ہے تو حاضری ہوئی ہے

 

جہانِ کن سے ادھر کیا تھا، کون جانتا ہے

مگر وہ نور کہ جس سے یہ زندگی ہوئی ہے

 

ہزار شکر غلامانِ شاہِ بطحا میں

شروع دن سے مری حاضری لگی ہوئی ہے

 

بہم تھے دامنِ رحمت سے جب تو چین سے تھے

جدا ہوئے ہیں تو اب جان پر بنی ہوئی ہے

 

سر اٹھائے جو میں جارہا ہوں جانبِ خلد

مرے لئے مرے آقا نے بات کی ہوئی ہے

 

مجھے یقیں ہے وہ آئیں گے وقتِ آخر بھی

میں کہہ سکوں گا زیارت ابھی ابھی ہوئی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات