اردوئے معلیٰ

Search

دل کی تلخی مٹا درودوں سے

نطق شیریں بنا درودوں سے

 

ہر رکاوٹ ہٹا درودوں سے

راہ اپنی بنا درودوں سے

 

مجھ کو دونوں جہان کی دولت

ہو رہی ہے عطا درودوں سے

 

نعت کا در جو بند تھا مجھ پر

ہو گیا مجھ پہ وا درودوں سے

 

مالکِ دو جہان کی مجھ کو

مل گئی ہے عطا درودوں سے

 

سخت بے چین و مضطرب تھا میں

پھر کرم ہو گیا درودوں سے

 

راحتِ قلب کی طلب تھی مجھے

مل گئی بے بہا درودوں سے

 

رب سے دوری تھی کس قدر میری

مٹ گیا فاصلہ درودوں سے

 

میں جو اُن کی نظر میں رہتا ہوں

ہے یہ ساری عطا درودوں سے

 

اُس پہ کرتے ہیں رشک شمس و قمر

جس نے پائی ضیا درودوں سے

 

دل کا مرہم بنا ہے ذکرِ نبی

دل نے پائی شفا درودوں سے

 

کوئی تدبیر جب نہ کام آئی

کفر کو رد کیا درودوں سے

 

ذکرِ صلِّ علیٰ کو جاری رکھ

اور منزل کو پا درودوں سے

 

ایک دیوار سامنے تھی مرے

بن گیا راستہ درودوں سے

 

سب نے اتنا پڑھا درود اُن پر

بھر گئی ہے فضا درودوں سے

 

میں کہاں اور نبی کی نعت کہاں

کام سارا بنا درودوں سے

 

عمر جوں جوں مری گزرتی گئی

ربط بڑھتا گیا درودوں سے

 

مانگنے کا یہی سلیقہ ہے

ہر دعا کو سجا درودوں سے

 

زندگی رائیگاں گزرتی ہے

دور ہو کر فدا درودوں سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ