اردوئے معلیٰ

دل کی دہلیز پر قدم رکھا

دل کی دہلیز پر قدم رکھا

اُس نے کتنا مِرا بھرم رکھا

 

اِک دُعائے شکستہ حرف کو بھی

اُس کی بخشش نے محتشم رکھا

 

پاسِ آدابِ دید تھا واللہ

آنکھ پتھر تھی، دل کو نم رکھا

 

خود خطاؤں نے آنکھ جھپکا دی

اُس نے پیہم مگر کرم رکھا

 

سوچتا ہوں مدینہ بستی میں

رب نے کیا کیا نہیں بہم رکھا

 

رُخ کو رکھا بہ روئے کعبہ، مگر

دل کو سُوئے مدینہ خَم رکھا

 

ماسوا کچھ نہ تھا سخن مقصودؔ

نعت تھی ، نعت کو رقم رکھا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ