اردوئے معلیٰ

Search

دنیا نہیں دیتی تو نہ دے ساتھ ہمارا

ہم کو بہت شاہِ عرب تیرا سہارا

 

ہر چیز بدل جائے ترا پا کے اشارہ

کیا گردشِ افلاک ہے، کیا وقت کا دھارا

 

ہر سمت تھا پھیلا ہوا، طوفانِ تباہی

انسان کی کشتی کو ملا، تجھ سے کنارہ

 

پھر آپ کی جانب ہیں زمانے کی نگاہیں

پھر ایک نظر حاصل کونین خدارا

 

جالب کو یقیں ہے کہ تری چشمِ کرم سے

چمکے گا غریبوں کے مقدر کا ستارا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ