اردوئے معلیٰ

دو دل جلے باہم جلے تو روشنی ہوئی

کچھ وہ جلا، کچھ ہم جلے تو روشنی ہوئی

 

اتنا بڑھا کچھ حبسِ جاں کہ بجھ گئے خیال

کچھ دَر کھلے کچھ غم جلے تو روشنی ہوئی

 

کل رات گھر کی تیرگی دل میں اُتر گئی

دو دیدۂ پُر نم جلے تو روشنی ہوئی

 

اُلجھے ہوئے احساس نے دھندلا دیا شعور

جذبوں کے پیچ و خم جلے تو روشنی ہوئی

 

رستے سبھی تھے بے نشاں اپنی تلاش کے

انجم نما خود ہم جلے تو روشنی ہو ئی

 

اک عمر سے بے نور تھے زخموں کے سب چراغ

کچھ روز بے مرہم جلے تو روشنی ہوئی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات