دکھ تماشا لگائے رکھتا ہے

دکھ تماشا لگائے رکھتا ہے

زندگی تالیاں بجاتی ہے

آنکھ رہتی ہے بے وجہ پُرنم

بے بسی روز مُسکراتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ