اردوئے معلیٰ

دیارِ نور میں اک آستاں دکھائی دیا

کفِ زمیں پہ دھرا آسماں دکھائی دیا

 

جناں کا نور تھا خوشبو کے مست جھونکے تھے

دیارِ نور بہ رنگِ جناں دکھائی دیا

 

خجل دکھائی دیئے ماہ و خاور و انجم

جہاں حضور کا تلوا عیاں دکھائی دیا

 

بدن جلانے لگی دھوپ روزِ محشر کی

تو سبز نور بھرا سائباں دکھائی دیا

 

وہیں پہ شوکتِ شاہی نے پاؤں چوم لئے

غلامِ شاہِ دو عالم جہاں دکھائی دیا

 

درونِ بابِ سلامی برائے تشنہ لباں

عطا و جود کا دریا رواں دکھائی دیا

 

حضور آپ کے میلاد کی مسرت ہے

جو رقصِ نور سرِ کہکشاں دکھائی دیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات