اردوئے معلیٰ

دیدہ و دل کے نگر سے عرصۂ حرماں اُٹھا

دیدہ و دل کے نگر سے عرصۂ حرماں اُٹھا

کس کی آمد سے حجابِ عالَمِ امکاں اُٹھا

 

دیدۂ شایق ہو محوِ حالتِ وارفتگی

اِک ذرا رُخسار سے تُو کاکلِ پیچاں اُٹھا

 

یک بیک رُک سے گئے ہیں قافلہ ہائے بہار

شیوہ ایجادِ تبسم موجۂ خنداں اُٹھا

 

ہے فراقِ شاہِ دیں کا غم ہی اصلِ زندگی

اے مریضِ ہجر ! دست از حاجتِ درماں اُٹھا

 

حُسن مائل ہے نمودِ ناز فرمانے کو پھر

شوق ! بس میں ہے تو پھر سے دیدۂ حیراں اُٹھا

 

بٹ رہی ہے پھر کرم کی بھیک دستِ شاہ سے

صوتِ بے حرفِ تمنا گوشۂ داماں اُٹھا

 

نُطق سے ممکن نہیں مقصودؔ شرحِ شوقِ دل

نعت کے احساس ہی سے خیر کا ساماں اُٹھا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ