اردوئے معلیٰ

کتاب میں ہے ذکر کچھ تو دیکھنے میں اور ہے

عجیب تجھ پہ وقت ہے عجیب تجھ پہ دور ہے

 

نماز تجھ پہ بار ہے زکوٰة تجھ پہ شاق ہے

تو نیکیوں میں سست ہے برائیوں میں چاق ہے

 

دماغ میں غرور ہے خیال میں فتور ہے

نگاہ نشہ خیز ہے شراب کا سرور ہے

 

زبان بھی کرخت ہے کلام بھی درشت ہے

تو جنگ جو تو تند خو پسند خون و کشت ہے

 

یہ عرس ہے مزار پر یہ نغمہ و سرود ہے

یہ راگ رنگ ہے ادھر یہ ناچ اور کود ہے

 

تو عقل کا اسیر ہے تو عقل کا غلام ہے

حرام اب حلال ہے حلال اب حرام ہے

 

نہ گرم تجھ سے بزم ہے نہ گرم تجھ سے رزم ہے

تو پست جان و تنگ دل نہ حوصلہ نہ عزم ہے

 

نہ قلب ہی سلیم ہے نہ ذہن تیرا صاف ہے

عزیز تر ہے تجھ کو وہ جو دین کے خلاف ہے

 

نہ عہد استوار ہے نہ قول میں قرار ہے

گرا ہے پستیوں میں تو زبون و خستہ خوار ہے

 

یہود سے ہنود سے مشابہت کا رنگ ہے

وہ طرز ہے وہ طور ہے وہ رنگ ہے وہ ڈھنگ ہے

 

خدا کا دین چھوڑ کر تو آپ بے ضمیر ہے

تو دشمنانِ دین کی لکیر کا فقیر ہے

 

فراق اَلکتاب سے فراق اَلحدیث سے

تو سیکھتا ہے علم و فن فرنگی خبیث سے

 

کتاب میں ہے ذکر کچھ تو دیکھنے میں اور ہے

عجیب تجھ پہ وقت ہے عجیب تجھ پہ دور ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات