اردوئے معلیٰ

دیکھ لو مری صورت جلوہ ہے خدائی کا

دیکھ لو مری صورت جلوہ ہے خدائی کا

ہے یہی حقیقت میں بھید مصطفائی کا

 

کر دیا خراباتی ساقیا مجھے تو نے

مٹ گیا مرے دل سے نقش پارسائی کا

 

وصل عین دوری ہے بے خودی ضروری ہے

کچھ بھی کہہ نہیں سکتا ماجرا جدائی کا

 

رنگ زرد ہوتا ہے دل میں درد ہوتا ہے

جب زباں پر آتا ہے ذکر آشنائی کا

 

اے عزیزؔ یہ باتیں یہ فریب کی گھاتیں

کسی سے تم نے سیکھا ہے ڈھنگ دل ربائی کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ