ذرہ ذرہ حمد تری ہی کرتا ہے

ذرہ ذرہ حمد تری ہی کرتا ہے

قطرہ قطرہ تیرے دم سے دریا ہے

 

آنگن آنگن ہے تیری ہی پھلواری

گوشہ گوشہ تیرے کرم سے مہکا ہے

 

حکم سے تیرے تیری رحمت کا بادل

تازہ پانی دھرتی پر برساتا ہے

 

قسمت کی جو شال ہے میرے کاندھے پر

تیری مرضی اْس کا تانا بانا ہے

 

خالق تو ہے، مالک تو ہے تو معبود

ہر گلشن تیرا ہر صحرا تیرا ہے

 

کنت کنزاً مخفیاً کے پردے سے

تیرا جلوہ خوب چمکتا رہتا ہے

 

پیڑ پرندے، وادی پربت جگنو میں

حسن ہے تیرا جلوہ ہر جا تیرا ہے

 

کوئی نہیں معبود مگر تو ، تو ہی تو

تو رازق ہے تو مالک تو داتا ہے

 

تیری رحمت کی شبنم سے کھل اٹھا

دل کا غنچہ جب جب بھی کملایا ہے

 

رات بھی اس کی مدح کرے تعریف کرے

سورج نامِ احمد کا یوں چمکا ہے

 

ایک صدف کیا اس کے جیسے جتنے ہیں

مولا تو نے سب کا پردہ رکھا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

میں تیرا فقیر ملنگ خدا
تو اعلیٰ ہے ارفع ہے کیا خوب ہے​
اے میرے مولا، اے میرے آقا، بس اپنے رستے پہ ڈا ل دے توُ
جانوں ترا جلال سنہرے ترے اصول
خداوندا! مرا دل شاد کر دے
کرے آباد گھر سُنسان میرا
محبت خلق سے رب العلیٰ کی
میں عاصی پُر خطا ہوں اور تو ستّار بھی غفار بھی ہے
صدائے کن فکاں اللہ اکبر
خدا ہم درد و مُونس مہرباں ہے

اشتہارات