اردوئے معلیٰ

ذکرِ رسولِ پاک میں عمرِ عزیز صرف کر

خونِ جگر نچوڑ کر نعتِ شہی میں رنگ بھر

 

چہرہ حسیں ہے اس قدر دیکھ سکے نہ آنکھ بھر

مصحفِ حق کا نور ہے سیرتِ پاک سر بسر

 

ماخذِ ہر سخن کہ ہے وحی خدائے با خبر

حرفِ سخن الف سےی تک ہے حسین و معتبر

 

ان کے کلامِ پاک کو ہم نے پڑھا ہے حرف حرف

بین السطور ہر جگہ جاذب دل ہیں نُہ گہر

 

دن میں نبرد آزما دینِ خدا کی راہ میں

را توں کو بندۂ شکور سر بہ سجود تا سحر

 

شہرِ علوم و آگہی، بحرِ حِکم میرا نبی

سب ہی سخن ہیں دل نشیں شیریں دہن ہے اس قدر

 

طائفِ بد نہاد کے خیرہ سروں کی مستیاں

سرتابہ پا وہ سیم تن اپنے لہو میں تر بہ تر

 

دامنِ آنحضور میں جائے اماں ملی انھیں

یومِ حساب سے کہ جو ترساں تھے حسبِ لا وَزَر

 

سرورِ دو جہاں کا خود اپنا شرف ہو کیا بیاں

اس کی گلی کے بے نوا جبکہ جہاں کے تاجور

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات