اردوئے معلیٰ

Search

ذکرِ سرکار سے کچھ ایسی ضیا پائی ہے

چاندنی جیسے مرے دل میں اُتر آئی ہے

 

میرے ادراک میں مہکی ہیں ثنا کی کلیاں

گلشنِ طیبہ سے اپنی بھی شناسائی ہے

 

مدحتِ شاہ میں مشغول رہوں شام و سحر

دل مرا ایسی سعادت کا تمنائی ہے

 

یہ ہنر ہو کہ میں اشعار کی لڑیاں باندھوں

منتظر کب سے مرے خامے کی رُشنائی ہے

 

اب تو لگتا ہے کہ انوار کی بارش ہو گی

اُجلی اُجلی ہے فضا نوری گھٹا چھائی ہے

 

تجھ کو اے ناز بلاتے ہیں رسولِ عربی

آج طیبہ سے یہ پیغام صبا لائی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ