اردوئے معلیٰ

Search

 

ذکر سرکار، دو عالم سے سوا رکھا ہے

یہ طریق اہلِ محبت نے روا رکھا ہے

 

آپ کے نام سے مقبول ہے کاوش میری

ورنہ میں کیا مرے اشعار میں کیا رکھا ہے

 

قدم صاحب معراج نے بخشا ہے عروج

ورنہ سچ پوچھو تو کونین میں کیا رکھا ہے

 

ارضِ طیبہ کا تصوّر ہے سبق جینے کا

حق نے مٹی میں بھی کیا رازِ شفا رکھا ہے

 

از ازل تا بہ ابد جو بھی جہاں ہے جو کچھ!!

حق نے سب کچھ انہیں قدموں پہ جھکا رکھا ہے

 

حاضریٔ حرمِ کعبہ کا میں اہل نہیں

میں نے کعبہ درِ اقدس کو بنا رکھا ہے

 

مل ہی جائے گی کسی روز بصیرت مجھ کو

میں نے کچھ ذرّوں کو آنکھوں سے لگا رکھا ہے

 

کرمِ سیّدِ کونین کو کیا کہیے صبیح

درد کا نام محبت نے دوا رکھا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ