اردوئے معلیٰ

Search

راحتِ جاں کہاں سے ملتی ہے

اسی جانِ جہاں سے ملتی ہے

 

جو بھی نعمت ہے دو جہانوں کی

ایک ہی آستاں سے ملتی ہے

 

وہ سبھی کے نبی ہیں اس کی سند

ہر زمان و مکاں سے ملتی ہے

 

سبز گنبد کی رفعتیں اللہ

ایک حد لامکاں سے ملتی ہے

 

اب ہمارے چمن میں ہے وہ بہار

جس کی صورت خزاں سے ملتی ہے

 

جبکہ ہر خشک و تر کو شادابی

ترے ابرِ رواں سے ملتی ہے

 

میرے دل میں حضور بستے ہیں

یہ زمیں آسماں سے ملتی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ