اردوئے معلیٰ

Search

راحت بجاں معطّر وہ دل فزا تھا ہاتھ

عنبر فشاں ہو جیسے وہ مخملیں سا ہاتھ

 

جذبہ طلب کا مجھ میں ہوتا نہ تھا کبھی

رحمت نے اس کی بڑھ کر تھاما تھا میرا ہاتھ

 

گل کی لطافتیں ہیں جس پر نثار پیہم

ہے کتنا نرم و نازک میرے نبی کا ہاتھ

 

دامن میں لے کے خوشبو زلفِ حبیب کی

خوشبوئیں بانٹتا ہے دستِ صبا کا ہاتھ

 

شاہوں کی بھیڑ ہے کیوں در پرلگی ہوئی

اٹھا ہے شاید ان کی جود و سخا کا ہاتھ

 

آؤ کریم کے در دنیا کے غمزدو

ہر غم کو ٹالتا ہے اس غم کشا کا ہاتھ

 

میری نجات کو بس کافی ہے یہ ظفر

رہتا ہے سر پہ میرے آلِ عبا کا ہاتھ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ