اردوئے معلیٰ

Search

راہِ وفا میں اولاً کتنے ہی ہم سفر گئے

آیا جو وقتِ امتحان جانے وہ سب کدھر گئے

 

یادِ شباب رہ گئی عہدِ شباب اب کہاں

میرے بھی دن گزر گئے تیرے بھی دن گزر گئے

 

اپنوں سے اور غیروں سے کتنے ہی غم اٹھائے تھے

زخم زباں کے ہیں ہرے، زخم سناں کے بھر گئے

 

کالی گھٹا کا ہو سماں چاند ہو جس کے درمیاں

گیسوئے تابدار جب شانوں پہ وہ بکھر گئے

 

دورِ عروج اب کہاں اب تو ہے سایۂ زوال

ننگِ بشر ہے آدمی علم گھٹا ہنر گئے

 

کوئے بتاں کی بات ہے مجبوریوں کا ہو برا

رکنا نہ تھا ہمیں رکے جانا نہ تھا مگر گئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ