اردو معلی copy
(ہمارا نصب العین ، ادب اثاثہ کا تحفظ)

ربِّ کائنات

وہ ابتدا، وہ انتہا

وہی عیاں، وہی نہاں

وہ قادر و حکیم ہے

رحیم ہے، کریم ہے

سمیع اور بصیر ہے

علیم ہے، خبیر ہے

وہ نورِ ارض و آسماں، وہ ربِّ کائنات ہے

عیوب سے منزّہ اور مصفّا اس کی ذات ہے

مقیم ہے وہ عرش پر، بجا یہ بات ہے ، مگر

رگِ گلو سے ہر بشر کی وہ بہت قریب ہے

ہمارے دل کے سارے راز تک سے ہے وہ باخبر

اسی نے پیدا کیں زمین و آسماں کی نعمتیں

ہے اس کے دسترس میں سب کی موت اور زندگی

ہر ایک بیج کو دیا اسی نے قوتِ نمو

اتارتا ہے پانی ہم پہ آسمان سے وہی

زمین و آسماں سے ہم کو رزق کرتا ہے عطا

وہی نظامِ کائنات کا ہے تنہا منتظم

زمیں، فلک، شجر، حجر، نجوم و مہر و کہکشاں

یہ ماہتابِ تیز رو، صبا، گھٹا، چمن، خزاں

یہ صبح و شام کا طلوع اپنے وقتِ خاص پر

یہ بحرِ بیکراں، یہ کوہسار و جوئے مضطرب

سب اس کے زیر حکم ہیں

وہی ہے سب کا حکمراں

تمام حمد اور ستائشوں کا مستحق ہے وہ

اسی کی بندگی کرو، اسی سے التجا کرو

اسی کے سامنے سرِ نیاز کو جھکاؤ تم

شریک مت بناؤ اس کی ذات میں کسی کو تم

یہ انبیا، یہ اولیا، یہ صوفیان با صفا

یہ دیوتا، رشی منی،

سب اس کے بندہ و غلام ہیں یہ خود خدا نہیں

مت ان کے سامنے جھکو

عظیم سے عظیم تر یہ عہد نو کے فتنہ گر

یہ حکمراں، یہ زر پرست

سب اس کے آگے ہیچ ہیں

نہ ان سے التجا کرو

اسی کی بندگی کرو جو ربِ کائنات ہے

اسی سے التجا کرو، وہی ہے سب کا بادشاہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

مری جبیں ہے فقط تیرے آستاں کے لیے
ضیائے کون و مکاں لا الٰہ الا اللہ
دیار ہجر میں شمعیں جلا رہا ہے وہی
فلک میں حدّ ِ نظر لا اِلہ الہ اللہ
لحد چاہوں مدینے میں خدا، تیری عبادت میں
خدا کا اسم، اسمِ دلکشا ہے
خدا کی یاد سے پہلے وضو اشکوں سے کرتا ہوں
خدا کے فضل سے ہر دم مرا دامن بھرا ہے
جو انسانوں کا ناحق خوں بہائے
خدا واحد، خدا ممتاز و اعظم