ربیعِ اول میں موسموں کے نصاب اترے

ربیعِ اول میں موسموں کے نصاب اترے

ترستے صحراؤں میں شگفتہ گلاب اترے

 

نعالِ شاہِ امم کا لمسِ منیر پانے

حرا کی آغوش میں کئی ماہتاب اترے

 

ہماری آنکھوں میں یادِ بطحا کا نور چمکا

کنارِ مژگاں برسنے والے سحاب اترے

 

ہزاروں قدسی زمیں پہ بیٹھے تھے پر بچھائے

رکابِ قصویٰ سے جس گھڑی آں جناب اترے

 

جھکایا سر میرے خام خامہ نے بہرِ مدحت

تو حرف قرطاسِ قلب پر مستجاب اترے

 

ہماری پلکیں بھی ہَوں زیارت گہِ ملائک

ہماری پلکوں پہ گر مدینے کا خواب اترے

 

رسولِ رحمت شفیعِ محشر ہَوں جن کے آقا

یہ غیر ممکن ہے ان پہ کوئی عذاب اترے

 

دیارِ فرقت میں کب سے اشفاق مضطرب ہے

مدینے جائے تو روح سے اضطراب اترے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ہوا حمد خدا میں دل جو مصروف رقم میرا
کسی اور کے خدا سے نہ غرض نہ واسطہ ہے
یا نبی سلام علیک یا رسول سلام علیک
غمِ حیات سے گرچہ بہت فگار ہوں میں
محمد کے روضے پہ جا کر تو دیکھو
یہ پیغامِ حبیبِ کبریا ہے
سرمایۂ جمال ہے طیبہ کے شہر میں
دہر کے اجالوں کا، جوبن آپ کے عارض
آئے رسولِ پاک تو منظر بدل گیا
نگر سونا مرے دل کا بسائیں یا رسول اللہ

اشتہارات