اردوئے معلیٰ

Search
آیہ کریمہ ” لَقَد جَاءَکُم رَسُولٌ مِّن اَنفُسِکُم” کا ابتدائی حصّہ بطور ردیف نظم(خیال رہے انفُسِکم کو ایک قراءت میں فا کی فتح کے ساتھ بھی پڑھا گیا ہے)

 

رحمت کا ہے نُزول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

فَرحِ دلِ ملول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

تنویر ِقلب و روح بَکَف قولِ ” جَاءَ نُور ”

افزائشِ عُقول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

تَشریفِ لَم یَزَل ہے ” لَقَد مَنَّ ” کا مَفاد

اِعزازِ لَا یَزُول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

وہ اَنفَس و رَؤوف ورحیم و شفیق ہیں

ہے شاہِدِ عَدُول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

وجہِ فتوحِ غیب "فَتَحنَا ” کا وِرد ہے

اور کُنجیِ قبول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

ویسے تو سارا گلشنِ مصحف ہے لاجواب

پر ہے جدا یہ پھول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

ہے دال حُسنِ فَرحتِ مَولِد پہ عقل اور

مِن جُملۂِ نُقول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

مُنکِر کو ” کُلُّ بِدعَہ ضَلالَہ ” تو یاد ہے

لیکن گیا ہے بھول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

 

اپنا بَحالِ وَجد مُعظمؔ یہ وِرد ہے

قَد جَاءَکُم رَسُول لَقَد جَاءَکُم رَسُول

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ