اردوئے معلیٰ

Search

رخ سے نقاب اٹھ گیا قہرِ تجلیات ہے

دیکھ ابھی نہ الحذر لمحۂ حادثات ہے

 

تیری ہی ذات باعثِ رونقِ کائنات ہے

تیری ہی یاد سے سجی بزمِ تصورات ہے

 

یوں تو ہر ایک رند پر ساقی کا التفات ہے

مجھ پہ ہے کچھ سوا مگر میری کچھ اور بات ہے

 

زخم کچھ اور داغ کچھ، اور متاعِ آرزو

دل کو ٹٹولتے ہو کیا کل یہی کائنات ہے

 

میری نظرؔ میں آ کبھی دل میں مرے سما کبھی

جلوہ گری تری نہاں مانا کہ شش جہات ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ