اردوئے معلیٰ

رسولِ خدا کی ثنا لکھ رہا ہوں

یوں بیمار دل کی دوا لکھ رہا ہوں

 

نہ چھیڑو مجھے تم ابھی تو نبی کے

تبسّم پہ میں تبصرہ لکھ رہا ہوں

 

جو جامِ شہادت پئے کربلا میں

انہیں زندہ یوں ہی سدا لکھ رہا ہوں

 

درودوں کی ڈالی لبوں پر سجا کے

میں نعتِ شہِ انبیا لکھ رہا ہوں

 

رسول خدا آپ کا نام دل پر

میں دھڑکن سے صبح و مسا لکھ رہا ہوں

 

جو عالم میں بچتا رہا معصیت سے

اُسے میں یہاں پارسا لکھ رہا ہوں

 

جو پڑھتا ہے کلمہ فقط اب زباں سے

منافق اُسے برملا لکھ رہا ہوں

 

مدینے کی خاکِ شفا کو ہی شمسی

ہمیشہ میں دردِ دوا لکھ رہا ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات