اردوئے معلیٰ

رفعتیں جس پہ مٹیں کتنی حسیں عورت ہے

خواتین کے عالمی دن کی مناسبت سے ایک نظم

عورت

 

رفعتیں جس پہ مٹیں کتنی حسیں عورت ہے

آسماں مرد اگر ہے تو زمیں عورت ہے

 

رنگ تخلیق کئے ،دنیا کو خوش بو بخشی

سچ اگر پوچھو تو یہ دھرتی نہیں ، عورت ہے

 

نسلِ آدم کو بقا بخشی انہی دونوں نے

وجہِ تخلیق کہیں دھرتی ، کہیں عورت ہے

 

اس نے جنت سے نکالا تھا ہمیں لیکن آج

گھر وہ جنت ہے اگر گھر میں مکیں عورت ہے

 

اس کے قدموں تلے رکھ دی ہے خد انے جنت

مرحبا آفریں جنت کی امیں عورت ہے

 

آبرو پورے پریوار کی، ہر بھائی کا مان

گھر کی ملکہ بھی یہی تخت نشیں عورت ہے

 

اس کو ہر روپ میں بخشی ہے بلندی رب نے

فہم و ادراک سے بالا و بریں عورت ہے

 

جنسِ بازار نہیں ہے کہ خریدو ، بیچو

احترام اس کا ہے جو پردہ نشیں عورت ہے

 

چاندنی میرے بھی آنگن میں بچھی جاتی ہے

میرے گھر میں بھی تو اک ماہ جبیں عورت ہے

 

دیکھ لو پلکوں کے گھونگھٹ میں حیا دلہن کی

پھر یہ بتلاؤ کہیں ایسی حسیں عورت ہے

 

اس کی مسکان کو ہم دیکھ کے جی اٹھتے ہیں

پھول پت جھڑ میں کھلا دے ، وہ زمیں عورت ہے

 

اس کے قدموں میں ہی جنت ہے سبھی نبیوں کی

مان لو فرش پہ یہ عرشِ بریں عورت ہے

 

پارسائی بھی تو ثابت ہے کنواری ماں کی

سوچو اس دنیا میں مریم سی کہیں عورت ہے

 

اس کی آغوش میں تہذیبوں نے آنکھیں کھولیں

مادرِ شہنشہِ دنیا و دیں عورت ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ