اردوئے معلیٰ

رنج و الم سے دُور بلا لیجئے حضور

قربِ دیارِ نُور بلا لیجئے حضور

 

آنکھوں میں خواب طیبہ کے دل میں ہیں حسرتیں

کچھ کیجیئے حضور بلا لیجئے حضور

 

گو لائقِ دیار نہیں پھر بھی میرے شاہ

اک بار تو ضرور بلا لیجئے حضور

 

میں نے سنا ہے نور کی برسات ہوتی ہے

طیبہ میں ہے سُرور بلا لیجئے حضور

 

دنیا کے ظلم سے ہے مری جان جاں بلب

زخموں سے چور ، چور بلا لیجئے حضور

 

ناچیز پر بھی ہو کبھی چشمِ کرم ، عطا

رحمت کا بھی ظہور بلا لیجئے حضور

 

بخشش کی بھیک مجھ کو بہت ہوں گناہ گار

ہے عرض یاحضور بلا لیجئے حضور

 

کب سے تڑپ رہا ہے رضاؔ اذن دیجیئے

زیرِ قبائے نور بلا لیجئے حضور

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات