اردوئے معلیٰ

 

روز روشن بھی ترا لوحِ سیہ بھی تیری

تو ہے موعود کل عالم پر نگہ بھی تیری

 

ابر باراں پہ نہ کر ناز کہ اے دست کریم

کشت بے دانہ و بے آب و گیاہ بھی تیری

 

ہم نے دیکھے ہی بنا تجھ کو بنایا معبود

ہم تو اس دشت میں مانگے ہیں پنہ بھی تیری

 

جشن میلاد میں خوش بو ہے تری فطرت کی

تیرے محبوب کی ہے سالگرہ بھی تیری

 

زندگی روپ میں جنت کا سماں ہو جائے

گل پہ ہو جائے اگر ایک نگہ بھی تیری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات