اردوئے معلیٰ

Search

روشن ہُوا ہے دہر میں ایسا دیا حسین

جس کو بجھا سکی نہ مخالف ہوا حسین

 

خوشبو سے جس کی آج معطر گلی گلی

بستانِ مصطفٰے کا گلِ خوشنما حسین

 

نام و نشاں یزید کا دنیا سے مٹ گیا

اسمِ گرامی آپ کا زندہ رہا حسین

 

بہتا فرات آن کے قدموں میں آپ کے

ہاتھوں کو ایک بار جو دیتے اٹھا حسین

 

قرآن پڑھا جاتا رہا سو بسو مگر

نوکِ سناں کے اوج پہ تو نے پڑھا حسین

 

باطل کو اپنے نام سے جوڑا یزید نے

حق تو ہمیشہ تیری طرف ہی رہا حسین

 

سجدہ جلیل قابلِ تحسین وہ ہی ہے

کرب و بلا کی ریت پہ جو کر گیا حسین

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ