روشن ہے کراں تا بہ کراں اسمِ محمد

روشن ہے کراں تا بہ کراں اسمِ محمد

ہے باعثِ تکوینِ جہاں اسمِ محمد

 

چکّھوں گا میں اس نورِ پُر انوار کی لذت

رکّھوں گا یونہی وردِ زباں اسمِ محمد

 

اِس نام کی برکت سے ہوئی دور بلائیں

ہے دافعِ ہر درد و زیاں اسمِ محمد

 

لکھا ہے سرِ لوح بڑی شان سے رب نے

ہے زود اثر ، نور فشاں اسمِ محمد

 

بے یار و مددگار کو سب خستہ دلوں کو

دیتا ہے ہر اک غم سے اماں اسمِ محمد

 

جب ہوں گی الٰی غیری صدائیں سرِ محشر

تب ہو گا ہر اک لب پہ رواں اسمِ محمد

 

مشکل مجھے پیش آئے گی دنیا میں جہاں بھی

ڈھارس مری باندھے گا وہاں اسمِ محمد

 

یہ جانِ دو عالم ہے یہی جانِ جہاں ہے

یہ اسمِ محمد ہے میاں اسمِ محمد

 

دیتا ہوں مؤذن کے تتبع میں گواہی

سنتا ہوں جو دورانِ اذاں اسمِ محمد

 

ہر زخم کا مرہم ہے محبت میں یہ منظر

تریاق ہے بر خستہ دلاں اسمِ محمد

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ