اردوئے معلیٰ

رہی عمر بھر جو انیسِ جاں وہ بس آرزوئے نبی رہی

رہی عمر بھر جو انیسِ جاں وہ بس آرزوئے نبی رہی

کبھی اشک بن کے رواں ہوئی ، کبھی درد بن کے دبی رہی

 

شہ دیں کے فکر و نگاہ سے مٹے نسل و رنگ کے فلسفے

نہ رہا تفاخرِ منصبی ، نہ رعونتِ نسبی رہی

 

سرِ دشتِ زیست برس گیا ، جو سحابِ رحمتِ مصطفے

نہ خرد کی بے ثمری رہی ، نہ جنوں کی جامہ دری رہی

 

تھی ہزار تیرگی فتن ، نہ بھٹک سکا مرا فکر و فن

مری کائناتِ خیال میں نظرِ شہِ عربی رہی

 

وہ صفا کا مہرِ منیر ہے ، طلب اس کی نورِ ضمیر ہے

یہی روزگارِ فقیر ہے ، یہی التجائے شبی رہی

 

وہی ساعتیں تھیں سرور کی ، وہی دن تھے حاصل زندگی

بحضور شافع ِامتاں مری جن دنوں طلبی رہی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ