اردوئے معلیٰ

Search

زخم ہائے جاں لئے مرہموں کی آس میں

کب سے چل رہا ہوں میں دہرِ ناسپاس میں

 

چلتے چلتے خاک تن ہو گیا ہوں خاک میں

تار ایک بھی نہیں اب قبا کے چاک میں

 

دل نشان ہو گیا ایک یاد کا فقط

رہ گئی ہے آنکھ میں ایک دید کی سکت

 

زہر جو ہوا میں تھا آ گیا ہے سانس میں

ذہن میں گرہ جو تھی وہم کے لباس میں

 

پھانس بن کے درد کی شاہ رگ میں گڑ گئی

کرب اِس قدر سوا، یاد ماند پڑ گئی

 

ٹیسیں روز اٹھتی ہیں درد کے پگھلنے تک

درد جانے کتنے ہیں حالِ دل سنبھلنے تک

 

اور کتنا روؤں اب، اشک خوں تو ہو گئے

رنگ وحشتوں کے سب، ہاں جنوں تو ہو گئے

 

دشتِ ہجر کی ہوا داؤ سارے چل چکی

اور کتنا چلنا ہے، رات کتنی ڈھل چکی

 

تارے کتنے ٹوٹیں گے تیرگی کے چھٹنے تک

ناشکیب و نا رسا بخت کے پلٹنے تک

 

مہر کے نکلنے میں قہر کتنے رہتے ہیں

کاسۂ جدائی میں زہر کتنے رہتے ہیں

 

درد کتنے باقی ہیں لا علاج ہونے میں

اشک کتنے باقی ہیں تجھ سے مل کے رونے میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ