اردوئے معلیٰ

Search

زرکی طلب ، نہ شاہ کی پوشاک چاہئیے

بس اک نگاہِ سّیدِ لولاک چاہئیے

 

رحمت کی اوس پر ہے چمن بھی فدا جسے

گُل سے بھی قبل ہستیِ خاشاک چاہئیے

 

تارِ کفن سے پھوٹیں گے جلوے مزار میں

اسمِ شہِ مدینہ سرِ چاک چاہئیے

 

اے خوش گلو! یہ مدح سرائی ، بجا مگر

تاثیر کے لئے، دلِ صد چاک چاہئیے

 

کرنی ہے شمعِ نور سے گر روح پُر ضیا

ہر دم لبوں پہ ذکرِ نبی پاک چاہئیے

 

بزمِ حضور عشق میں وہ بزم ہے جہاں

شیدائی کو جنوں میں بھی ادراک چاہئیے

 

مرغان خوش نصیب جو گنبد پہ ہیں انہیں

پَر چاہئیں نہ وسعت افلاک چاہئیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ