اردوئے معلیٰ

زمین و آسماں روشن ہوئے ہیں اُن کی طلعت سے

کِھلے رشد و ہدایت کے چمن اُن کی عنایت سے

 

اُنہی کا فیض ہے کہ زندگی نے زندگی پائی

شرف حاصل ہوئے انسانیت کو اُن کی نسبت سے

 

نسب میں اور حسب میں وہ ہیں اعلیٰ رفعتوں والے

کوئی اونچا نہیں ہے خلق میں آقا کی رفعت سے

 

اُنہی سے غم کدے میں رونقیں آئیں ہیں خوشیاں بھی

چھما چھم رحمتیں برسی ہیں ہر سو ابرِ رحمت سے

 

ملی ہے راحتِ دارین و عزت اُن کو دنیا میں

جنہیں ہے پیار شاہِ دین و ملت کی اطاعت سے

 

قمر شقُ القمر کی شکل میں ظاہر ہوا لوگو!

پھرا سورج بھی الٹے پاؤں پل میں اُن کی قدرت سے

 

کسی کو بھی شرف حاصل ہوا نہ یہ رضاؔ بیشک

ہوئے مسرور بس آقا ہی اللہ کی زیارت سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات