اردوئے معلیٰ

زمیں بھی ہے تری آسماں بھی تیرا ہے

یہاں بھی راج ترا ہے وہاں بھی تیرا ہے

 

یہ سارے لعل و جواہر تری ہی کان میں ہیں

مہ و نجوم کا یہ کارواں بھی تیرا ہے

 

ہے آستانہ مدینے میں تیرے دلبر کا

جو مکہ میں ہے وہ پاک آستاں بھی تیرا ہے

 

گزر رہی ہے تری رحمتوں کے سائے میں

جہاں بھی تیرا نظامِ جہاں بھی تیرا ہے

 

خوشی کی فصل رہے یا رہے غموں کی رُت

بہار تیری ہے دورِ خزاں بھی تیرا ہے

 

ترے اشارے پہ چلتا ہے لاکھ ہو طوفاں

سفینہ بھی ہے ترا بادباں بھی تیرا ہے

 

کہیں پہ پھول کہیں خار و خس ہیں جلوہ نما

یہ دشت بھی ہے ترا گلستاں بھی تیرا ہے

 

غموں کی دھوپ میں دن گزارے ہیں ہم نے

ہمارے سر پہ مگر سائباں بھی تیرا ہے

 

نواز ساحرِؔ بے بس کو اپنی رحمت سے

کہ اس کی زیست کا سود و زیاں بھی تیرا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات