اردوئے معلیٰ

Search

زندگی دشتِ انا ہے یہاں کس کا سایا

اپنے سائے کے علاوہ نہیں ملتا سایا

 

دور جائیں جوشجرسے تو جھلس جانے کا ڈر

چھاؤں میں بیٹھیں تو اپنا نہیں بنتا سایا

 

بڑھ گئی میری تھکن اور بھی اے شہر امان

آزما کر تری دیوار کا دیکھا سایا

 

عکس شیشے کے گھروں میں نظر آتے ہیں ہزار

دھوپ آ جائے تو ڈھونڈے نہیں ملتا سایا

 

اُس کے آنچل کی دھنک کو تو ذرا کھُلنے دو

جلتا سورج بھی پکارے گا کہ سایا سایا

 

ایک دیوارِ عداوت تھی کہ گرتے گرتے

شہر میں چھوڑ گئی خوف کا گہرا سایا

 

جب بھی کاندھے پہ اٹھاتا ہوں میں بچوں کو ظہیر

میری قامت سے بھی بڑھ جاتا ہے میرا سایا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ