زُہد و تقویٰ را تو اے زاہد شفیعِ خویش ساز

زُہد و تقویٰ را تو اے زاہد شفیعِ خویش ساز

من کسے دارم کہ در محشر بفریادم رسد

 

اے زاہد، تُو اپنے زُہد و تقویٰ کو اپنے لیے

(روزِ قیامت کا) شفیع بناتا رہ (اور مجھے

مت سُنا کیونکہ) میں ایک ایسے دامن

سے وابستہ ہوں کہ جو روزِ محشر

(شفیع بن کر) میری فریادوں کو پہنچے گا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ