سبھی سرگوشیاں جب ھار کے دم توڑ دیتی ھیں

سبھی سرگوشیاں جب ھار کے دم توڑ دیتی ھیں

کوئی نغمہ مُسلسل گونجتا ھے دھیان میں پھر بھی

بنفشے کے سبھی پھولوں کو لے جاتی ھے جب پت جھڑ

کوئی خوشبو جواں رھتی ھے دل دالان میں پھر بھی

 

گلابوں کی جواں مَرگی پہ کچھ عرصہ فُغاں کرکے

بکھرتی پتّیاں سجتی ھیں پیاری خواب گاھوں میں

سو ایسے ھی تری یادیں ھیں میرے ساتھ تیرے بعد

محبت تا ابد زندہ رھے گی میری آھوں میں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

سوچتا ہوں صیدِ مرگ ِ ناگہاں ہو جاؤں گا
مجھے تمغۂ حُسنِ دیوانگی دو
انتخاب 1988ء
عشق
نومبر چل رہا
عید پھیکی لگ رھی ھے، عشق کی تاثیر بھیج
نِیلگوں پانی کے ھر گھونٹ سے انکار کِیا
پہنچ سے دُور ، چمکتا سراب ، یعنی تُو
سجا کے چہرے پہ بیگانگی نہیں ملنا
تُجھ سے دور آتے ہوئے جانا کہ یہ سب کیا ہے