اردوئے معلیٰ

Search
حدیث میں ہے : اَنا وَضَع٘تُ الرُّک٘نَ بِیَدی ترجمہ : میں نے ہی اپنے دست مبارک سے رکن اسود کو نصب کیا (دلائل النبوہ للاصفہانی )
مذکورہ حدیث سے ماخوذ لقبِ مصطفیٰ ” واضعِ سنگِ اسود ” بطور ردیف نظم :

 

سب سے ازہَد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود !

تُو ہے اَعبَد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود !

 

مفخرِ نسلِ کرامات بھی ہے ذات تری

نازشِ جَد اے مِرے واضِعِ سنگِ اسود

 

جانِ ایجاب ترے اسمِ عنایت کے بغیر

ہے دعا رد اے مِرے واضِعِ سنگِ اسود

 

مقصدِ حورِ جِناں ، رشکِ مہ و خور ٹھہرا

تیرا اَسود اے مِرے واضعِ سنگِ اسود

 

تیری اُمّت کے لیے رب نے بنایا عالَم

سارا مَعبَد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود

 

تیرے بوسے سے ہوا چومنے والوں کا شفیع

سنگِ اَسوَد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود

 

قدمِ نور سے رشکِ مہ و خور کردے مری

خاکِ مرقد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود

 

تیری نسبت سے معظمؔ سے اصاغر کا شہا

ہے بڑا قد اے مِرے واضعِ سنگِ اسود

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ