اردوئے معلیٰ

ستم کی خو نہیں تم میں تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو

ستم کی خو نہیں تم میں تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو

نہ مطلب چھیڑ ہو دل سے تو آخر دل ستاں کیوں ہو

 

وہ تجھ سے سرگراں کیوں ہو نصیبِ دشمناں کیوں ہو

ہمیشہ خوش گمانی چاہیے تو بد گماں کیوں ہو

 

نہیں کہنے کی عادت جس کو پڑ جائے تو ہاں کیوں ہو

سمجھ لے آدمی فطرت تو پھر دل پر گراں کیوں ہو

 

نہ ہو جس کو دماغِ چشمکِ برقِ تپاں ہمدم

سرِ شاخِ چمن اس کو مذاقِ آشیاں کیوں ہو

 

بنا ہے سنگِ میل اس راہ کا وہ رہ نوردوں کو

جو راہِ عشق میں کام آئے بے نام و نشاں کیوں ہو

 

نہ لوں گا اپنے سر الزامِ بیش و کم نہیں لوں گا

بتانِ داستانِ غیر کو میری زباں کیوں ہو

 

ہماری آہِ دل پہنچی سرِ عرشِ بریں جا کر

ہماری راہ میں حائل فرازِ آسماں کیوں ہو

 

جو پیاسا ہو کنویں کے پاس جائے چل کے وہ خود ہی

نظرؔ جوئے رواں کو جستجوئے تشنگاں کیوں ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ