اردوئے معلیٰ

ستّر برس

جب کرکے آئے آگ کے دریا کو پار ھم

صد موجِ خُوں مِلی مُتَلاطم بہَر قدم

جَھیلے ھر ایک گام پہ تاریخ کے سِتَم

ھر پل سہے ھیں سینکڑوں صدمات بیش و کم

 

ایسا نہیں کہ جَست کوئی بھر کے آئے ھیں

ستّر برس طویل سفَر کر کے آئے ھیں

 

ھے رنج کونسا کہ جو ھم نے نہیں سہا

کیا کیا نہ اشک دیدۂ خُونبار سے بہا

آدھا بدن گنوا دیا، آدھا بدن رھا

لیکن زباں سے حرفِ شکایت نہیں کہا

 

گو تن بدن میں سینکڑوں نیزے گڑے رھے

میداں میں ھم چٹان کی صورت کھڑے رھے

 

صد شُکر آج بھی نہیں ٹُوٹا ھمارا عزم

الحمد آج بھی ھے وھی اھتمامِ بزم

ھم جنگجُو بلا کے ھیں، چاھے کوئی ھو رزم

بس تھوڑا صبر چاھئیے، تھوڑا سا ضبط و نظم

 

رخشندہ و جفاکش و پائندہ قوم ھیں

تاریخ ھے گواہ کہ ھم زندہ قوم ھیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ