اردوئے معلیٰ

سختیِ مرحلۂ دار تک آ پہنچا ہے

طالبِ حق کسی معیار تک آ پہنچا ہے

 

ساقی اک جرعہ کے اصرار تک آ پہنچا ہے

شیخ انکار سے اقرار تک آ پہنچا ہے

 

نالۂ درد مرا عرش رسا ہے شاید

رحم اب قلب ستمگار تک آ پہنچا ہے

 

بزم کی بزم پہ طاری ہے سکوتِ مستی

ذکر شاید نگہِ یار تک آ پہنچا ہے

 

لشکرِ شر کو کوئی روکنے والا اٹھے

بڑھ کے اب تو صفِ اخیار تک آ پہنچا ہے

 

مژدہ باد آبلہ پایانِ رہِ شوقِ وفا

قافلہ وادئ پرخار تک آ پہنچا ہے

 

عرش والوں میں بڑی دھوم نظرؔ ہے اِمشب

کوئی مطلوب طلبگار تک آ پہنچا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات