اردوئے معلیٰ

سردارِ رسل خواجۂ گیہاں کی طرح

کوئی بھی نہیں احمدِ ذی شاں کی طرح

 

امت کو وہ محبوب دل و جاں کی طرح

امت سے محبت ہے اسے ماں کی طرح

 

وہ دل میں سمایا مرے ایماں کی طرح

یونہی مری صورت ہے مسلماں کی طرح

 

گیسو ہیں ترے سنبلِ پیچاں کی طرح

ہے تیری جبیں مہرِ درخشاں کی طرح

 

ابرو ہیں ترے خنجرِ بُرّاں کی طرح

مژگاں ترے واللہ ہیں پیکاں کی طرح

 

آنکھیں ہیں تری چشمِ غزالاں کی طرح

کیف ان میں ہے کیفِ مئے عرفاں کی طرح

 

رخسار ترے ہیں گلِ خنداں کی طرح

دنداں میں چمک گوہرِ رخشاں کی طرح

 

صورت ہے منور مہِ تاباں کی طرح

سیرت ہے سراسر تری قرآں کی طرح

 

ہر حرفِ سخن لولوء و مرجاں کی طرح

ہر بات تری آیتِ قرآں کی طرح

 

ہے ظلمتِ دوراں پرِ پرّاں کی طرح

عالم میں ہے تو شمعِ فروزاں کی طرح

 

ہے شرم و حیا غیرتِ نسواں کی طرح

سطوت ہے تری سطوتِ شاہاں کی طرح

 

ہر حکم ترا ہے بہ دل و جاں تسلیم

طاعت ہے تری طاعتِ یزداں کی طرح

 

کوچہ ہے ترا مرجعِ عالم شاہا

مجمع ہے جہاں حشر کے میداں کی طرح

 

حسن آپ کا ہے یوسفِ کنعاں سے سوا

کیسے میں کہوں یوسفِ کنعاں کی طرح

 

اعزاز و شرف آپ کا اللہ اللہ

بلوائے گئے عرش پہ مہماں کی طرح

 

سردارِ ملائک وہی جبریلِ امیں

دولت کدۂ پاک میں درباں کی طرح

 

نبیوں کو ملے کب ترے جیسے ساتھی

صدیقؓ و عمرؓ حیدرؓ و عثماںؓ کی طرح

 

گنبد پہ ترے گنبدِ مینا قرباں

بہتات تجلی کی ہے باراں کی طرح

 

روضہ کو وہ دن آئے کہ میں بھی دیکھوں

ارماں ہے مرے دل میں یہ ارماں کی طرح

 

ہے تیرا طلب گار زمانہ سارا

مطلوب ہے تو مرضی یزداں کی طرح

 

ہے آپ کی تعلیم کا ادنیٰ اعجاز

آدم نظرؔ آتا ہے جو انساں کی طرح

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات