اردوئے معلیٰ

Search

سرورِ سروراں فخرِ کون و مکاں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

تیری چوکھٹ ہے بوسہ گہِ قدسیاں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

جو زمانے میں پامال و بدحال تھے ، ان کو بخشے ہیں تو نے نئے ولولے​

تجھ سے روشن ہوا بختِ تیرہ شباں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

حدِ روح الامینی سے بھی ماوراء ، تیری محشر خرامی ہے معجز نما​

اے گلستانِ وحدت کے سروِ رواں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

تیرا طرزِ تکلم ہے موجِ صبا ، تیرے الفاظ پر نورو نکہت فدا​

نطق سے تیرے ناطق ہے ربِ جہاں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

زینت افزائے برجِ ”دنیٰ“ہے توئی ، مسند آرائے عرشِ علیٰ ہے توئی​

ہے توئی بزمِ قوسین کا رازدا ں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

تیری رحمت عداوت فراموش ہے ، تو عطا پاش ہے تو خطا پوش ہے​

دشمنِ جاں کو بھی تو نے بخشی اماں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

وہ جسے تیرا آئین مرغوب ہے ، کب وہ تہذیبِ حاضر سے مرعوب ہے​

تیری سیرت تمدن کی روحِ رواں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

قائدِ انس و جاں ، خسروِ خشک و تر ، رہبرانِ امم تیرے دریوزہ گر​

تیرا ہر نقشِ پا نورِدیدہ وراں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

میرے الفاظ درماندہ و بے نوا ، میرا سرمایہِ ِ فکرو فن نارسا​

مجھ ساعاجز کہاں تیری مدحت کہاں ، تجھ سا کوئی کہاں تجھ سا کوئی کہاں​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ